نجات حاصل کرنے کے قدرتی طریقے

آپ نے اکثر سنا ہوگا کہ جب ہم کھانا کھاتے ہیں اور دانت صاف نہیں کرتے تو کھانے کے اجزاءدانتوں میں رہ جاتے ہیں اور اس طرح دانتوں میں کیڑا لگنا شروع ہو جاتا ہے اور وہ سڑ جاتے ہیں۔ یہ نظریہ امریکی ماہر دندان نے پیش کیا تھا لیکن اب اس نظریے کو رد کیا جانے لگا ہے۔
ماہرین کا خیال ہے کہ دانتوں میں کیڑا لگنے کا تعلق ہماری روزمرہ کی خوارک سے ہے اور اگر ہماری خوراک میں غذائیت کم ہو تو دانتوں میں کیڑا لگنا یقینی ہے۔تحقیق کار ڈاکٹر ویسٹن پرائس کا کہنا ہے کہ اگر کھانے میں لحمیات، منرلز، وٹامن اور غذائیت کم ہو تو ہماری ہڈیاں اور دانت کمزور ہونا شروع ہوجاتے ہیں ۔خون میں کیلشیم اور فاسفورس کا تناسب خراب ہوجاتا ہے جبکہ بیکٹیریا ان کمزوریوں کی وجہ سے حملہ آور ہوتا ہے اور دانتوں میں کیڑا لگ جاتا ہے۔ڈاکٹر ویسٹن کا کہنا ہے کہ اگر دانتوں کے کیڑے سے نجات حاصل کرنی ہے تو ہمیں اپنی خوراک کی طرف توجہ دینی ہوگی ۔اس کا کہنا ہے کہ ہمیں اپنی روزانہ کی خوارک میں چند بنیادی تبدیلیاں کرنی ہوں گی یعنی کھانے میں ناریل کا تیل، گوشت،ڈیری،سی فوڈ کا استعمال کرے تو یہ بہت مفید ہے۔ اس کا کہنا تھا کہ کلیجی، گردے کا استعمال بھی مفید ہے لیکن ساتھ ہی ایسی خوراک سے پرہیز کیا جائے جس سے گلوکوز براہ راست خون میں شامل ہو کہ اس طرح خون کا تناسب خراب ہوگا لہذا آٹا، لوبیا، دالیں وغیرہ کا استعمال کم کردیا جائے تو دانت بیکٹیریا سے محفوظ رہیں گے اور ان میں کیڑا بھی نہیں لگے گ
اگر آپ دانتوں کے درد کھوڑ ٹھنڈا گرم لگنے ماسخورہ اوردانتوں سے پیپ اور خون آنا دانتوں کا ہلنا اور مسوڑوں کے خراب ہونے جیسے مسائل سے پریشان ہیں تو بے فکر ہو جائیں آج میں آپ کوچند جاندار اور زبردست اجزاء پر مشتمل ایک سفوف تیار کرنے کا طریقہ بتاؤں گا جو ان تمام مسائل کا ایک ہفتے میں خاتمہ کر دے گا ناظرین دانت آپ کی خوبصورتی کے لیے ہی نہیں بلکہ آپ کی اچھی صحت کے بھی ضامن ہوتے ہیں ان کی دیکھ بھال اور صفائی میں عدم دلچسپی زندگی بھر کا روگ بن جاتی ہے مسوڑھوں کی سوزش اور ان سے خون نکلنا دانتوں کی پہلی بیماری ہے

اگر آپ کا منہ بیکٹیریا سے پاک نہیں ہوگا تو ناصرف دانتوں اور مسوڑوں کو نقصان پہنچے گا بلکہ آپ کا جسم بھی انفیکشن سے متاثر ہوگا جو لوگ دانتوں کی بیماریوں میں مبتلا ہوتے ہیں وہ لوگ امراض قلب اور شریانوں کی بیماریوں میں آسانی سے مبتلا ہو سکتے ہیں تو چلتے ہیں ناظرین نسخے کی تیاری کی طرف ناظرین نسخہ کے اجزاء نوٹ فرمالیں سرخ پھٹکڑی 5 تولہ سفید پھٹکڑی 5 تولہ عقرقرحا ایک تولہ کالی مرچ ایک تولہ لونگ ایک تولہ نمک سیاہ ایک تولہ اور سرکہ انگوری ایک پاؤ تیاری کا طریقہ کچھ اس طرح سے ہے سرخ اور سفید پھٹکڑی کو توے کڑاہی یا کسی برتن میں ڈال کر چولہے پر رکھ دیں اور ان پر سرکہ انگوریتھوڑا تھوڑا کرکے ڈالتے جائیں اور کسی چمچہ سے ہلاتے جائیں جب سرکہ ختم ہوجائے تو پھٹکڑی کو خشک ہونے سے پہلے چولہے سے اتار لیں اس پھٹکڑی کو اچھی طرح کھرل کریں اور باقی بھی تمام اجزا کا باریک سفوف بنا کر پھٹکڑی میں مکس کر دیں اب اس سفوف کو کسی ایئر ٹائٹ بوتل میں بند کر کے محفوظ کر لیں استعمال کا طریقہ اس طرح ہے کہ رات کو کھانے پینے سے فارغ ہوکر چمچ کا چوتھا حصہ سفوف لے کر ہلکے ہاتھ سے دانتوں اور مسوڑھوں پر ملیں اگر داڑوں میں کھوڑ ہے تو ایک چٹکی کھوڑ میں ڈال دیں پندرہ منٹ کے بعد تازہ پانی سے دھولیں سات دن لگاتار استعمال سے انشاءاللہ یہ تمام مسائل حل ہو جائیں گے حتا کہ حلتے ہوئے دانت بھی ٹھیک ہو جائیں گے ناظرین آپ کے تعاون کا شکرگزار ہوں نسخہ پسند آئے تو لائیک ایک اور دوستوں سے شیئر ضرور کیجئے گا اللہ حافظ